Gazal by Rafeeq Jafer

غزل

رفیق جعفر

AB KE SAAWAN MAIN DIL YE BHARA HI RAHA
WOO KHAFA THA JO MUJH SE KHAFA HI RAHA

PANCHI BICHDE TO MUJH SE SHAJAR NE KAHA
MAIN ZAMEEN PAR PADA SOONCHTA HI RAHA


SB KHUDAI KE DAVY DHARE RAH GAYA
JO KHODA THA KHODA WO KHODA HI RAHA

AS KY BHASHAN MAIN NAFRAT KE SHOLEY HI THHAY
MOONH KHULA THA MERA BAS KHULA HI RAHA

AB KE MOOSAM MAIN AIYSI HAWAYEEN CHALI
MANZILEEN KHO GAYI RAASTA HI RAH

BE WAFAI KO DAOLAT HAWA DE GAYI
BE WAFA BE WAFA BE WAFA HI RAHA

WOH JO BICHDE TO JAFAR SE DIL NE KAHA
ZAKHM MERA HARA THHA HARA HI RAHA


اب کے ساون میں دل یہ بھرا ہی رہا
وہ خفا تھا جو مجھ سے خفا ہی رہا

پنچھی بچھڑے تو مجھ سے شجر نے کہا
میں زمین پر پڑھا دیکھتا ہی رہا

سب خدائی کے دعوے دھرے رہ گئے
جو خدا تھا خدا وہ خدا ہی رہا

اس کے بھاشن میں نفرت کے شعلے ہی تھے
منہ کھلا تھا مرا بس کھلا ہی رہا

اب کے موسم مین ایسی ہوائیں چلیں
منزلیں کھوگئیں راستہ ہی رہا

  بے وفائی کو دولت ہوا دے گئی
بے وفا، بے وفا، بے وفا ہی رہا

وہ جو بچھڑے تو جعفرؔ سے دل نے کہا
زخم میرا ہرا تھا ہرا ہی رہا

Labels: , , , , ,

way to success
Search Followsubscribesmstwitteryoutubeorkutfacebooklinkedin
Google Custom Search